(+92) 0317 1118263

مصارف زکوۃ و صدقات

ہسپتال کے سامان وغیرہ لینے کے لئے زکوۃ دینا

ہسپتال کے سامان وغیرہ لینے کے لئے زکوۃ دینا فتوی نمبر: 41423

الاستفتاء

کیا زکوٰۃ کسی ایسے اسپتال کے سامان وغیرہ کیلئے دی جاسکتی ہے، جس میں امیر، غریب سب کا علاج ہوتا ہو؟ جبکہ وہ رفاہی اسپتال ہو؟

الجواب حامدا و مصلیا

بغیر تملیکِ شرعی کے، ایسے اسپتال میں اپنی زکوٰۃ دینا تو درست نہیں، جس سے احتراز لازم ہے، البتہ تملیکِ شرعی کے بعد یا پھر اسپتال والے خود کسی مستحق سے باضابطہ تملیک کرواکر اسپتال کی ضروریات میں یہ رقم لگاتے ہوں تو یہ درست ہوگا۔


کما فی الدر: ویصرف الی کلہم او الی بعضہم تملیکًا) لا اباحۃ کما مر (لا) یصرف الی بناء نحو مسجد ولا الی (کفن میت وقضاء دینہ) الخ۔


وفی الشامیۃ: قولہ نحو مسجد کبناء القناطیر والسقایات واصلاح الطرقات وکری الانہار والحج والجہاد وکل مالا تملیک فیہ۔ (ج۱، ص۱۸۸)۔ واللہ اعلم بالصواب