(+92) 0317 1118263

نماز کا کفارہ

سوائے لین دین کے معاملات کے عورت کی گواہی مرد کے برابرہے؟

سوائے لین دین کے معاملات کے عورت کی گواہی مرد کے برابرہے؟ فتوی نمبر: 38733

سوال

ایک بندہ یہ دعویٰ کررہا ہے کہ عورت کہ آدھی گواہی صرف لین دین کے معاملے میں ہے باقی اس کی گواہی مرد کے برابر ہے، یہی قرآن سے ثابت ہے کیا اس کا دعویٰ ٹھیک ہے؟ اگر غلط ہے تو کہاں ہے؟ صرف قرآن سے ثابت کرو کہ میں غلط ہوں، راہنمائی فرمائیں۔

الجواب حامدا و مصلیا

شرعاً عورت کی گواہی کی مختلف حیثیتیں ہیں، کہیں اس کی گواہی بالکل قبول نہیں کی جاتی، کہیں دو عورتوں کی گواہی ایک مرد کے برابر شمار ہوتی ہے بشرطیکہ ساتھ میں کوئی مرد گواہ موجود ہو اور بعض مقامات پر اس کی اکیلے کی گواہی بھی معتبر ہوتی ہے، مگر اس مسئلہ میں بحث و مباحثہ کرنے کا کوئی حاصل نہیں ہے، اس لئے سائل کو چاہئے کہ بحث و مباحثہ کرنے سے اجتناب کرے۔