(+92) 0317 1118263

لے باپک کے احکام

لے پالک بھتیجے کی ولدیت میں اپنانام لکھوانا

لے پالک بھتیجے کی ولدیت میں اپنانام لکھوانا فتوی نمبر: 33635

الاستفتاء

آپ سے پوچھنا ہے کہ لے پالک اولاد اگر دیور ،جیٹھ سے لی ہو ں ،جبکہ چچا کو حدیث شریف میں باپ کے مانند کہا گیا ہے، کیا تب بھی اولاد کا ’’بی فارم‘‘ میں اصل والد کا نام دینا ہوگا؟

الجواب حامدا و مصلیا

جی ہاں!دیور اور جیٹھ سے لی ہوئی اولاد کے ’’بے فارم‘‘ اور دیگر کاغذات میں اصل والد کا نام درج کرانا لازم ہے، اصل والد کے علاوہ چچا، تایا کا نام درج کرانا ازروئے قرآن و حدیث ناجائز وحرام ہے، جس سے احتراز لازم ہے۔


في الدر المختار: الإقرار بالولد الذی لیس منہ حرام کالسکوت لاستلحاق نسب من لیس منہ الخ۔


وفی رد المحتار تحت قولہ (الاقرار بالولد الخ) قال ـ علیہ الصلوٰۃ والسلام ـ حین نزلت آیۃ الملاعنۃ (الی قولہ) وفي الصحیحین عنہ ـ علیہ الصلوٰۃ والسلام ـ (من ادعی أبا فی الإسلام غیر أبیہ وہو یعلم أنہ غیر أبیہ فالجنۃ علیہ حرام)۔ الخ (ج۳، ص۴۹۳) واللہ اعلم!