(+92) 0317 1118263

مباحات

کیاجنات(ہم زاد) کو مسخرکیاجاسکتاہے؟ اوریہ جائزہے؟

کیاجنات(ہم زاد) کو مسخرکیاجاسکتاہے؟ اوریہ جائزہے؟ فتوی نمبر: 33297

الاستفتاء

کما فی الہندیۃ: قال لہا أنت مثل أمی ولم یقل علی ولم ینوشیأ لا یلزمہ شیئ فی قولہم کذا فی فتاویٰ قاضیخان الخ (ج۱، ص۵۰۷)۔ واللہ اعلم

الجواب حامدا و مصلیا

ہم زاد (جنات) کا وجود حق اور ان کی تسخیر ممکن ہے مگر وہ آزاد مخلوق ہے بلا ضرورت ان کو اس طرح مسخر اور قید کرلینا کہ ان کا ارادہ واختیار باقی نہ رہے، درست نہیں۔


فی آکام المرجان: الباب العاشر فی بیان القرین من الجن (الی قولہ) وہو ما رواہ أحمد بن حنبل قال: قال رسول اللہ ـ صلى الله عليه وسلم ـ ما من أحد منکم الا وقد وکل بہ قرینہ من الجن وقرینہ من الملائکۃ۔ الخ (ص۵۱)


وفیہ أيضا: فصل قال الشیخ ابو العباس بن تیمیۃ لم یخالف أحد من طوائف المسلمین فی وجود الجن، وجمہور طوائف الکفار علی إثبات الجن (الی قولہ) فجماہیر الطوائف تقر بوجود الجن بل یقرون بما یستجلبون بہ معاونۃ الجن من العزائم والطلاسیم۔ الخ (ص۲۱) واللہ اعلم