(+92) 0317 1118263

سود

سودی اداروں میں رقم رکھنے کا حکم

سودی اداروں میں رقم رکھنے کا حکم فتوی نمبر: 13530

الاستفتاء

meray abu fout hochukay hain.meray 2 bahi hain aik perh raha hay or aik jobless hay.abu ki retirement say jo saving thi usay aik bank may fix kerwa ker us kay munafah say gher ka khercha chlatay hain.mera sawal yeh hay kay kia yeh pasay istamal kerna jaiz hain kiyoonkay hum nay yahi suna hay kay aik aam bank or islamic bank may pasay per munafah layna beraber hay dono sood hain.chonkay bahi abhi natejerbakar hay is liye wo abhi koi business bhi nahi kersekta.is surat may hamay plz guied kijeey hum kia kerain? koi amidni ki or koi surat nahi.ALLAH AP KO IS KA AJER DAY

الجواب حامدا و مصلیا

سودى بينكوں ميں رقم ركه كر اس كا منافع وصول كرناسود ہے جوكہ شرعاناجائز اور حرام ہے جس احتراز لازم ہے ، اوراگريہ رقم بجائے كسى سودى ادارے ميں ركهنے كے بجائےكسى معتمد شخص يا ادارےكيساته حلال كاروبارميں لگا كر اسكى آمدنى استعمال كرتے رہيں،تويہ بلاشبہ جائز اوردرست ہےاوراگر بينك ميں ركهنا ہى مقصود ہو تو بجائے سودى بينكوں ميں ركهنے كے ميزان بينك يا بينك اسلامى ميں ڈيپازٹ كروادى جائے اوراس سے حاصل ہونے ولامنافع استعما ل ميں لايا جائے تو اس كى بهى اجازت ہے