(+92) 0317 1118263

امامت و جماعت

صلوۃ التسبیح کو جماعت سے پڑہنے کا حکم

صلوۃ التسبیح کو جماعت سے پڑہنے کا حکم فتوی نمبر: 13524

الاستفتاء

SALAT UL TASBEEH : iss namaz ki JAMAT karwai ja sakti hai,aksar loag iss ko jamat ki shakal mai adaa kartay hai,jiss mai aik imaam aur baki muktadii.ham nay to yaha tak bhee suna k mastoorat bhee kisi ghar mai ekhati ho kar jamat ki shakal mai Salat ul tasbeeh ada karti hai.dono sorto mai kiya ye theek hai?salat ul tasbeeh ada kartay waqat jb do rakato k baad Atthiyaat mai baithtay hai to iss mai darood sharif , aur dua bhee parni hai ,,, phir us k baad bghair salam kiyay teeesri rakat(3rd) k liyay khara hona hai aur SUBHANAKALLAH HUMMA (SANA) say parhna hai YA jaisay ham 4 rakatay sunnat muakkada Zohar namaz ki ada kartay hai waisa parhna hai?? saheeh tareeka btatien, Shukria.....

الجواب حامدا و مصلیا

واضح ہوكہ صلوہ تسبيح نفل نماز ہے ،اس ميں جماعت ثابت نہيں ، اسى بناء پر فقہاء كرام نے اس ميں تداعى كے ساته جماعت كرنے كو مكروہ لكهاہے اس لئے اسے باجماعت اداكرنے كى بجائے انفرادى طورپر ہى پڑهنے كا اہتمام چاہئے جبكہ اس كى ادائيگى كا طريقہ يہ ہے كہ پہلے قعدہ ميں تشہد كے بعد دورد شريف اور دعاپڑهى جائے اورتيسرى ركعت ميں سورہ فاتحہ سے پہلے ثناء اورتعوذ تسميہ بهى پڑهى جائے